Best Sardar Jokes in Urdu 2021

Best Sardar Jokes in Urdu 2021

Sardar Jokes in Urdu

 

Get unlimited Sardar Jokes in Urdu, we have all types of sardar ji jokes in Urdu, if your searching that kind of sardar jokes then is post especially designed for you, all jokes we will share only for your entertainment.

I have heard from my childhood that Sardar always talks in such a way that you will be surprised and you will laugh, i am not sure that is only fun or reality because i don’t have such kind of Sardar friend, if you see around then you can easily find lot of funny sardar jokes on different platform, A few years ago, many books and newspapers used to publish funny sardar jokes in urdu, but now people are spend more time on social media, so you can easily find Sardar Jokes in Urdu on social media.

We have to use Sardar jokes only for fun, not to take it seriously and not to hate any Sardar friend, avoid sharing this Sardar ji ke chutkule with your Sardar friends and making fun of him, that is impact your friendship or maybe you lose your best Sardar friend forever, they are human beings and they have feelings, we have to be careful before share to any friends or social media.

As user point of view, we listed all types of sardar jokes in urdu that are most searching on internet, we include best sardar jokes, funny sardar jokes in urdu, sardar jokes in roman urdu, sardar jokes in urdu images, indian sardar jokes in urdu, punjabi sardar jokes in urdu and many more, we hope you like our Sardar jokes collection and share it with your friends and families. 

Sardar Jokes in Urdu

Below we listed lot of sardar jokes in roman urdu and urdu language, you can copy them and use on any social platform, we are regularly update latest best Sardar jokes, so let’s start, scroll down and enjoy funny sardar jokes. 

ہٹلر سیز ،

” دیئر اِس نو ورڈ لائک امپوسیبل ان مائی دکشنری “

سردار : اب بولنے سے کیا فائدہ ؟

” جب خریدی تھی تب ہی چیک کرنا تھا نا “

hitler says ,

” there iss no word like impossible un maai dictionary “

sardar : ab bolnay se kya faida ?

” jab khridi thi tab hi check karna tha na “

 

1 سردار ریل کی پٹری پر سو گیا .

1 آدمی نے کہا کیا کر رہے ہو ؟ ٹرین آئیگی تو مر جاؤگے !

سردار : میرے اوپر سے ہوائی جھاز گزر گیا تو کچھ نہیں ہوا ، ٹرین کیا چیز ہے ؟

1 sardar rail ki patri par so gaya .

1 aadmi nay kaha kya kar rahay ho? train aegi to mar jaoge !

sardar : mere oopar se hawai jahaz guzar gaya to kuch nahi sun-hwa, train kya cheez hai ?

پہلا سردار : اوئے اگر نیند نا آئے تو کیا کیا جائے ؟

دوسرا سردار : نیند کا انتظار کرنے سے اچھا ہے کی بندہ سو ہی جائے

pehla sardar : oye agar neend na aaye to kya kya jaye ?

dosra sardar : neend ka intzaar karne se acha hai ki bandah so hi jaye

پولیس : تمہیں کل صبح 5 بجے پھانسی دی جائے گی .

سردار : ہا ہا ہا ہا !

پولیس : کیوں ہنس رہے ہو ؟

سردار : میں تو اٹھتا ہی صبح 9 بجے ہوں 

police : tumhe kal subah 5 bujey phansi di jaye gi .

sardar : ha ha ha ha !

police : kyun hans rahay ho ?

sardar : mein to uthta hi subah 9 bujey ho

اک دفعہ پٹھان اور سردار کسی ہوٹل میں ساتھ كھانا کھانے گئے . . . . . . . گلاس اُلٹا پڑھا تھا

پٹھان : یار گلاس کا تو منه ہے بند ہے

سردار : اور نیچے سے وی ٹوٹا ہوا ہے

ik dafaa pathan aur sardar kisi hotel mein sath khana khanay gaye. .. .. .. glass ulta parha tha

pathan : yaar glass ka to munh hai band hai

sardar : aur neechay se v toota sun-hwa hai

سردار واپڈا والو کو فون کر کے کہتا ہے یار بجلی بند کرو مجھے نئی گالی یاد آئے ہے وہ تم کو دینی ہے

sardar wapda walo ko phone kar ke kehta hai yaar bijli band karo mujhe nai gaali yaad aaye hai woh tum ko deeni hai

 

ایک سردار کے بیٹے نے ایڈمیشن فارم فل کرتے وقت باپ سے پوچھا کے اِس میں مدر ٹنگ والے خانے میں کیا لکھنا ہے سردار نے کہا لکھ دے پوتیر ویری لانگ 

aik sardar ke betay ne admission form full karte waqt baap se poocha ke iss mein mother tang walay khanaay mein kya likhna hai sardar ne kaha likh day “very long”

 

سردار كے باغیچہ میں بہت سارے پیڑ تھے ،

سردار نوکر کو بولا پیڑ کو پانی دال .

نوکر بولا صاحب بارش آہ رہا ہے ،

سردار : ابھے بدھو چھتری پکڑ کر دال نا !

sardar ke baagicha mein bohat saaray pairr thay ,

sardar nokar ko bola pairr ko pani daal .

nokar bola sahib barish aah raha hai ,

sardar : abhy budhu chhatri pakar kar daal na !

پولیس : ہمیں آپ کے گھر کی تلاشی لینی ہے ، پتہ چلا ہے کے آپکے گھر میں خطرناک بم ہے .

.

.

.

سردار : خبر تو پکی ہے

مگر آج وہ میکے گئی ہوئی ہے

police : hamein aap ke ghar ki talashi lenihai, pata chala hai ke apkay ghar mein khatarnaak bomb hai .

.Sardar : khabar to paki hai

magar aaj woh maikay gayi hui hai

سردار نے اپنی حاملہ بیوی کو ایک ایس ایم ایس بھیجا۔

دو سیکنڈ بعد ایک رپورٹ آئی

اس کے فون پر اور وہ ناچنے لگا۔

رپورٹ میں کہا گیا ، “نجات”۔

sardar nay apni haamla biwi ko aik s am s bheja .

do second baad aik report aayi

is ke phone par aur woh nachnay laga .

report mein kaha gaya,” nijaat” .

ٹیچر : اس محاوارے کو جملے میں استمعال کرو

“منہ میں پانی انا”

.

سردار اسٹوڈنٹ : جیسے ہی میں نے نال کو منہ سے لگا کر نال چلو کیا تو میرے منہ میں پانی اگیا

teacher : is mohavray ko jumlay mein astmaal karo

“Mera Moe May Pani Ana”

sardar student- : jaisay hi mein naay naal ko mun se laga kar naal chalo kya to mere mun mein pani agya

Sardar Jokes in Roman Urdu

سردار کو گلی میں 100 روپے کا نوٹ ملا

نوٹ كے اوپر لکھا تھا “عید مبارک”

.

سردار نے ادھر اُدھر دیکھا ،

اور نوٹ جیب میں راکھتے ہوئے بولا

“خیرمبارک”

sardar ko gali mein 100 rupay ka note mila

note ke oopar likha tha “Eid Mubarak”

sardar ne idhar udhar dekha ,

aur note jaib mein rakhty hue bola

“Khair Mubarak”

سردار آنکھیں بند کرکی آئینہ كے سامنے کھڑا ہو گیا

.بیوی نے پوچھا ; یہ کیا کر رہے ہو ؟

سردار : دیکھ رہا ہو کہ میں سوتے ہوئے کیسا لگتا ہو

sardar ankhen band krki aaina ke samnay khara ho gaya

biwi ne poocha ; yeh kya kar rahay ho ?

sardar : dekh raha ho ke mein sotay hue kaisa lagta hon

1 سردار بس میں بیٹھا

اس کے سامنے 1 مولوی بیٹھ گیا

سردار ڈر گیا اور بولا “مولانا صاحب تسی دم درود والے او یا بمب بارود والے ؟ ”

1 sardar bas mein betha

is ke samnay 1 molvi baith gaya

sardar dar gaya aur bola “molana sahib tusi dam duroood walay o ya bomb barood walay? ”

سردار ایگزام میں بیٹھا کاپی پے اپنا پنجہ بنا رہا تھا

ٹیچر : پیپر میں ہاتھ کی ڈائے گرام کا کوئی سوال نہیں

سردار : میں پیپر بنانے والے پہ لعنت بھیج رہا ہوں . .

sardar exam mein betha copy pay apna panja bana raha tha

teacher : paper mein haath ki dai gram ka koi sawal nahi

sardar : mein paper bananay walay pay laanat bhaij raha hon.

سردار نے اپنی بِیوِی کو گولی مار دی

کیوں كے اس نے صرف اتنا کہا تھا كہ

میں اپنی زندگی ، ،

” شان ” اور ” شوکت ” كے ساتھ گزارنا چاہتی ہوں

sardar nay apni biwi ko goli maar di

kyun kay is nay sirf itna kaha tha ka 

mein apni zindagi,

” shaan” aur” Shaukat ” ka sath guzaarna chahti hon

 

2 سردار بھائی ایگزام حل میں

ٹیچر : تم دونوں نے اپنے فادر کا نام ڈفرنٹ کیوں لکھا ؟

سردار : تم پِھر بولتا کے ہم نے نقل کی ہے ہمارے پاس دماغ ہے میڈم

2 sardar bhai exam hal mein

teacher : tum dono naay –apne father ka naam different kyun likha ?

sardar : tum pِhr boltaa ke hum naay naqal ki hai hamaray paas dimagh hai maidam

سردار : آؤ ریس لگاتے ہیں ، جو ہارا وہ ایک ہزار روپے دیگا .

پٹھان : لیکن مجھے راستہ نہیں معلوم 

سردار : بس تم میرے پیچھے پیچھے آتے رہنا .

پٹھان : تھینکس یارا 

sardar : aao race lagatay hain, jo haara woh aik hazaar rupay dega .

pathan : lekin mujhe rasta nahi malum 

sardar : bas tum mere peechay peechay atay rehna .

pathan : thanx 

سردار – ہم رات کو سپنا دیکھا کی ہم

کترینہ كے ساتھ بیچ پر اسکی زلف سوار رہا تھا

پھر اچانک کہیں سے بارش ہونے لگا

آدمی – بیوقوف ، تم کتے كے ساتھ سو رہے تھے

اور اس نے سوسو کر دیا تھا

sardar – hum raat ko sapna dekha ki hum

Katrina ke sath beech par uski zulff sawaar raha tha

phir achanak kahin se barish honay laga

aadmi – bewaqoof, tum kuttay ke sath so rahay they

aur is ne susu kar diya tha

سردار جی ریڈیو سن رہے تھے۔ دوسرے نے پوچھا یہ کون سا سٹیشن لگا رکھا ہے، وہ بولے، جالندھر۔

دوسرا کہنے لگا، جالندھر کی بجلی کیوں خرچ کرتے ہو۔ لاہور لگاؤ تا کہ ان کی بجلی خرچ ہو۔

sardar jee radio sun rahay they. dosray ny poocha yeh kon sa station laga rakha hai, woh bolay, jalandhar .

dosra kehnay laga, jalandhar ki bijli kyun kharch karte ho. Lahore lagao taa ke un ki bijli kharch ho .

Funny Sardar Jokes in Urdu

ایک سردار جی نئی نئی سائیکل پر اپنی بہن کے ساتھ جا رہے تھے ۔ ان کے ایک دوست نے ان کی بہن کو دیکھا تو غلط فہمی میں مبتلا ہو گیا اور آواز لگائی ،

اوہو ، معشوقاں !

سردار جی تاؤ کھا گئے ، بولے ، معشوق ہو گی تیری ، میری تو بہن ہے

aik sardar jee nai nai cycle par apni behan ke sath ja rahay thay. un ke aik dost nay un ki behan ko dekha to ghalat fehmi mein mubtala ho gaya aur aawaz lagai ,

oho, mashoka!

sardar jee tao kha gaye, bolay, mashooq ho gi teri, meri to behan hai

سردار: تم بائیک اتنی تیز کیوں چلا رہے ہو؟

پٹھان: یہ خط ارجنٹ دینا ہے

سردار: کہاں؟

پٹھان: ابھی ایڈریس دیکھنے کا ٹائم نہیں ہے

سردار: او-کے گو فاسٹ

sardar : tum bike itni taiz kyun chala rahay ho ?

pathan : yeh khat urgent dena hai

sardar : kahan ?

pathan : abhi address dekhnay ka time nahi hai

sardar : OK go fast

سردار نے لڑکی سے پوچھا : لڑکیاں شادی كے وقت روتی کیوں ہیں ؟ لڑکی : وہ سوچتی ہیں اتنے سالوں بعد دلہا ملا ہے وہ بھی یہ

sardar ne larki se poocha : larkiyan shadi ke waqt roti kyun hain? larki : woh sochti hain itnay saloon baad dulah mila hai woh bhi yeh

 

سردار لڑکی كے گھر رشتہ مانگنے گیا . . . ! گھر والوں نے کہا ہماری لڑکی ابھی پڑھ رہی ہے . سردار : جی کوئی بات نہیں  میں تھوڑی دیر بعد آجاؤنگا

sardar larki ke ghar rishta mangnay gaya. ..! ghar walon ney kaha hamari larki abhi parh rahi hai. sardar : jee koi baat nahi mein thori der baad ajaonga

 

پڑوسی : رات کو دروازہ بند کر كے سویا کرو . . ! میں نے کل رات سب دیکھ لیا جو تم اپنی بیوی كے ساتھ کر رہے تھے . . . ! سردار : مارو تالی . . . ! ہم تو کل رات گھر تھا ہی نہیں .

parosi : raat ko darwaaza band kar ke soya karo. .! mein ne kal raat sab dekh liya jo tum apni biwi ke sath kar rahay thay. ..! sardar : maro taali. ..! hum to kal raat ghar tha hi nahi .

 

سردار : میں باتھ روم گیا وہاں سانپ بیٹھا ہوا تھا ، سردار کی بیوی : ہائے و ربا پِھر آپ نے کیا کیا ؟ سردار : کچھ نہیں ، سانپ سے کہا ( تسی کر لو میرا تے وچ ای نکل گیا )

sardar : mein bath room gaya wahan saanp betha sun-hwa tha, sardar ki biwi : haae o rubaa pِhr aap ney kya kya? sardar : kuch nahi, saanp se kaha ( tusi kar lau mera te vich he nikal gaya )

نرس سردار سے : یہ آپکا اتنا برا حال کس نے کیا ؟ سردار : میں اپنی بیوی کی فوٹو لے کر ٹرین میں سفر کر رہا تھا ، میں جب اُٹھنے لگا تو میری فوٹو ساتھ والی لڑکی كے پاس گر گئی ، میں نے کہا بہن جی ( ذرا سڑی اوپر کرنا ) فوٹو لینی ہے . ناراس : پِھر کیا ہوا ؟ سردار : پِھر کیا ہونہ تھا ، مجھے مار مار کر یہاں پہنچا دیا 

nurse sardar se : yeh aapka itna bura haal kis ne kya? sardar : mein apni biwi ki photo le kar train mein safar kar raha tha, mein jab utney laga to meri photo sath wali larki ke paas gir gayi, mein ne kaha behan jee ( zara sari oopar karna ) photo leni hai. nurse: pِhr kya sun-hwa? sardar : pِhr kya Hona tha, mujhe maar maar kar yahan pouncha diya

 

سردار کو انویٹیشن ملا پارٹی میں صرف لال ٹائی پہن کر انا سردار پارٹی میں جا کر حیراں رہ گیا كے لوگوں نے پینٹ اور شرٹ بھی پہنی تھی 

sardar ko invitation mila party mein sirf laal tie pehan kar anaa sardar party mein ja kar heraan reh gaya ke logon ne paint aur shirt bhi pahani thi

 

ایک سردار جی سموسہ کھول کر اندر سے آلو کھا رہے تھے . . ! کسی نے پوچھا یہ کیا کر رہے ہو ؟ سردار جی بولے : ڈاکٹر نے باہر کی چیزیں کھانے سے منع کر دیا ہے

 aik sardar jee samosa khol kar andar se aalo kha rahay thay. .! kisi ne poocha yeh kya kar rahay ho? sardar jee bolay : dr ne bahar ki cheeze khanay se mana kar diya hai

 

پولیس والا ( سردار چور ) سے : تمہیں چوری کرتے وقت اپنی بیوی اور بیٹی کا خیال نہیں آیا ؟ سردار : خیال تو آیا تھا مگر ، دکان پر سب مردانہ سوٹ تھے 

police wala ( sardar chor ) se : tumhe chori karte waqt apni biwi aur beti ka khayaal nahi aaya? sardar : khayaal to aaya tha magar, dukaan par sab mardana suit thay

 

سردار : یہ تم کیسی ماچس لے کر آئے ہو ایک بھی تیلی نہیں جل رہی ؟ بیٹا : کیا بات کرتے ہو آبا جی ، میں ایک ایک کر كے سب چیک کر كے آیا ہوں سب جل رہی تھی 

sardar : yeh tum kaisi maachis le kar aaye ho aik bhi teeli nahi jal rahi? beta : kya baat karte ho aaba jee, mein aik aik kar ke sab check kar ke aaya hon sab jal rahi thi

سردار کو ڈرپ لگی جب ڈرپ ختم ہونے لگی تو سردار نے اپنے چھوٹے بھائی سے 

کہا : جاؤ سسٹر کو بلا کر لاؤ . . . ! وہ گیا اور 3 دن بعد اپنی سسٹر کو لے کر اگیا

sardar ko drip lagi jab drip khatam honay lagi to sardar ne –apne chhootey bhai se kaha : jao sister ko bulaa kar lao. ..! woh gaya aur 3 din baad apni sister ko le kar agya

Indian Sardar Jokes in Urdu

سردار اور اسکا دوست دونو جنگل میں جا رہے تھے اچانک سامنے سے شعر اگیا ، سردار كے دوست نے مٹی اٹھائی اور شیر کی آنکھوں میں ڈال کردوڑ لگا دی. سردار کھڑا رہا ، دوست : ارے دوڑوں . . . ! سردار : میں کیوں دوڑوں ؟ مٹی تو تم نے ڈالی ہے 

sardar aur uska dost doono jungle mein ja rahay thay achanak samnay se shair agya, sardar ke dost ne matti uthai aur sher ki aankhon mein daal kar dor laga di. sardar khara raha, dost : arrey dorhon. ..! sardar : mein kyun dorhon? matti to tum ne daali hai

 

شادی پر منہ دیکھائی میں سردار نے بیوی کو گلاب کا پھول دیا ، بیوی : مجھے یہ نہیں چاہیے مجھے کوئی سونے کی چیز دو . . . ! سردار نے نیند کی گولی دے دی 

shadi par mun deekhaee mein sardar ne biwi ko ghulaab ka phool diya, biwi : mujhe yeh nahi chahiye mujhe koi sonay ki cheez do. ..! sardar ne neend ki goli day di

 

ڈاکڑ : اچھی صحت كے لیے ضروری ہے كے روز ورزش کی جائے ، سردار : ہم کرکٹ اور فٹبال روز کھیلتا ہے ، ڈاکڑ : گڈ ، کب تک ؟ سردار : جب تک موبائل کی بیٹری ختم نہیں ہو جاتی .

dakar : achi sehat ke liye zaroori hai ke roz werzish ki jaye, sardar : hum cricket aur football roz kheltaa hai, dakar : good, kab tak? sardar : jab tak mobile ki battery khatam nahi ho jati .

 

سردار اور دوست . . . ! دوست : تم نے اپنی بیوی کو طلاق کیوں دی ؟ سردار : وہ ٹھیک عورت نہیں ہے . دوست : وہ کیسے ؟ سردار : شادی مجھ سے کی اور بچے باگوان سے مانگ رہی تھی 

sardar aur dost. ..! dost : tum nay apni biwi ko Talaq kyun di? sardar : woh theek aurat nahi hai. dost : woh kaisay? sardar : shadi mujh se ki aur bachay bagwan se maang rahi thi

سردار اپنے دوست سے : یار میں اپنا کتا بییچنے جا رہا ہوں . دوست : یار میں خرید لیتا ہوں ، یہ کتا وفا دار تو ہے نا ؟ سردار : ہاں یار ، پہلے بھی 3 بار بییچ چکا ہوں ، ہر بار باگ کر میرے پاس آجاتا ہے .

Sardar – apne dost se : yaar mein apna kutta bachnay ja raha hon. dost : yaar mein khareed laita hon, yeh kutta wafa daar to hai na? sardar : haan yaar, pehlay bhi 3 baar bach chuka hon, har baar baag kar mere paas ajata hai .

 

سردار پولیس سے : کل رات چور میرے گھر سے ٹی وی كے سوا سب کچھ لے گئے . پولیس : تو ٹی وی کیوں چھوڑ کر چلے گئے ؟ سردار : کیوں كے ٹی وی تو میں دیکھ رہا تھا

sardar police se : kal raat chor mere ghar se TV ke siwa sab kuch le gaye. police : to TV kyun chore kar chalay gaye? sardar : kyun ke TV to mein dekh raha tha

 

سردار کو 20 روپے کی لاٹری میں سے 20 کروڑ روپے نکلے .

ڈیلر : یہ لو 10 کروڑ .

سردار : مجھے 20 کروڑ دو ورنہ مجھے میرے 20 روپے واپس کرو 

sardar ko 20 rupay ki lotry mein se 20 crore rupay niklay 

dealer : yeh lo 10 crore .

sardar : mujhe 20 crore do warna mujhe mere 20 rupay wapas karo

سردار کو فرینڈ نے کھانے پر بلایا . جب وہ گیا تو دروازے پر طالا لگا ہوا تھا ، اور لکھا ہوا تھا ( میں نے تو مذاق کیا تھا ) سردار نے نیچے لکھ دیا ( تو میں کونسا آیا تھا )

sardar ko friend naay khanay par bulaya. jab woh gaya to darwazay par طالا laga sun-hwa tha, aur likha sun-hwa tha ( mein naay to mazaaq kya tha ) sardar naay neechay likh diya ( to mein konsa aaya tha )

 

3 سردار ایگزام میں پیپر دینے كے بعد ، پہلا سردار : مجھے کچھ نہیں آتا تھا . دوسرا سردار : میں بھی یار . تیسرا سردار : شٹ یار ، ٹیچر نے اب سمجھنا ہے كے ہم تینو نے کاپی کی ہے

3 sardar exam mein paper dainay ke baad, pehla sardar : mujhe kuch nahi aata tha. dosra sardar : mein bhi yaar. teesra sardar : shut yaar, teacher ne ab samjhna hai ke hum teinu ne copy ki hai

سردار ڈاکڑ سے : کیا آپ بنا درد كے ڈانٹ نکل لیتے ہو ؟ ڈاکڑ : نہیں تو . سردار : لیکن میں نکل لیتا ہوں . ڈاکڑ : وہ کیسے ؟ سردار : ہی ہی ہی

sardar dakar se : kya aap bana dard kay daant nikal letay ho? dakar : nahi to. sardar : lekin mein nikal laita hon. dakar : woh kaisay? sardar : he he he

 

سردار جی کیا آپ کو کیلے کا چھلکا نظر نہیں آیا جو آپ اپنی ٹانگ تڑوا بیٹھے ؟ سردار : میں تو پاؤں رکھ کر چیک کر رہا تھا ، كے چھلکے كے اندھار تو کیلا نہیں

sardar jee kya aap ko kelay ka chilka nazar nahi aaya jo aap apni taang turwaa baithy? sardar : mein to paon rakh kar check kar raha tha, kay chilkay kay andhar to kela nahi

سردار کہیں جا رہا تھا كہ راستے میں بورڈ پر لکھا ہوا تھا پڑھنے والا گدھا تو سردار کو بہت غصہ آیا اور سردار نے اسے مٹا کر لکھ دیا لکھنے والا گدھا

sardar kahin ja raha tha kay rastay mein board par likha sun-hwa tha parhnay wala gadha to sardar ko bohat gussa aaya aur sardar ney usay mita kar likh diya likhnay wala gadha

سردار نے روڈ پر کھڑی کار كے نیچے ایک کتا لیتا ہوا دیکھا ، تو کُتے کو دم سے کھیینچا اور بولا یار میری گاڑی بھی ٹھیک کر دے اسٹارٹ نہیں ہو رہی

sardar naay road par khari car ke neechay aik kutta laita sun-hwa dekha, to kُte ko dam se khancha aur bola yaar meri gaari bhi theek kar day start nahi ho rahi

Punjabi Sardar Jokes in Urdu

بیوی : کیا تمہیں مجھ سے پیار ہے ؟ سردار : ہاں ہے . بیوی : پِھر تم میری پروا کیوں نہیں کرتے ؟ سردار : اوئے پاگل ، پیار کرنے والے کسی کی پروا نہیں کرتے 

biwi : kya tumhe mujh se pyar hai? sardar : haan hai. biwi : pِhr tum meri parwa kyun nahi karte? sardar : oye pagal, pyar karne walay kisi ki parwa nahi karte

 

بیوی : میں مرنے جا رہی ہوں . سردار : یہ لو ڈائری میلک . بیوی : یہ کس لیے ؟ 

سردار : خوشی كے موقع پر “کچھ میٹھا ہو جائے

biwi : mein marnay ja rahi hon. sardar : yeh lo diary milk biwi : yeh kis liye? sardar : khushi ke mauqa par “kuch meetha ho jaye

 

سردار ایک پارٹی میں گیا وہاں ایک حسینہ سے سردار نے کہا : کیا آپ ڈانس کرینگی ؟ لڑکی شرماتے ہوئے ہاں کیوں نہیں . سردار معصومیت سے : تو باجی پِھر میں یہ چیئر لے لوں ؟

sardar aik party mein gaya wahan aik haseena se sardar naay kaha : kya aap dance kareingi? larki sharmate hue haan kyun nahi. sardar masomiyat se : to baji pِhr mein yeh chair le lon ?

 

سردار اپنی منگیتر کو بہت دیر سے ُگُھور رہا تھا . لڑکی شرماتے ہوئے بولی : کیا دیکھ رہے ہو ؟ سردار : سردار میں سوچ رہا ہوں اگر تم میری امی ہوتی تو میں کتنا خوبصورت ہوتا 

sardar apni mangetar ko bohat der se ghour raha tha. larki sharmate hue boli : kya dekh rahay ho? sardar : sardar mein soch raha hon agar tum meri ammi hoti to mein kitna khobsorat hota

 

سردار بے اپنی پرانی بائیک کو دس دس كے نوٹس كے ساتھ ساجایا ہوا تھا . دوست : یہ کیا ہے سردار جی ؟ سردار : مجھے مکینک نے کہا ہے كے اِس پہ پیسے لگاؤ تو ٹھیک ہو جائے گی .

sardar be apni purani bike ko das das ke notice ke sath sajya hwa tha. dost : yeh kya hai sardar jee? 

sardar : mujhe mkink ne kaha hai ke iss pay paisay lagao to theek ho jaye gi

 

پولیس : تمہاری بیوی گم ہو گئی ہے تو تم نے ہمیں کیوں نہیں بتایا، سردار : وہ جی ، پہلے میری بائیک گم ہوئی تھی تو آپ نے 10 دن چلا كے دی تھی 

police : tumhaarii biwi gum ho gayi hai to tum nay hamein kyun nahi bataya, sardar : woh jee, pehlay meri bike gum hui thi to aap nay 10 din chala ke di thi

 

ڈاکڑ سردار سے : آپکی کڈنی فیل ہو گئی ہے . سردار پہلے تو بہت رویا پِھر آنسو صاف کر كے بولا : کتنے نمبر سے ؟

dakar sardar se : apkee kidney feel ho gayi hai. sardar pehlay to bohat roya pِhr ansoo saaf kar ke bola : kitney number se ?

 

سردار ایک لڑکی کو شادی كے لیے پرپوز کیا . لڑکی : سردار جی ، میں تو آپ سے 9 سال چھوٹی ہوں . سردار : چلو کوئی بات نہیں میں آپ سے 9 سال بعد شادی کر لوگا

sardar aik larki ko shadi ke liye perpose kya. larki : sardar jee, mein to aap se 9 saal chothee hon. sardar : chalo koi baat nahi mein aap se 9 saal baad shadi kar loga

 

سردار : یار یہ سنٹ میسیج کا کیا مطلب ہوتا ہے ؟ دوسرا سردار : یار تم تو بالکل جاہل ہو تمہیں اِس کا مطلب نہیں پتہ . سنٹ میسیج کا مطلب “خوشبو والا میسیج

sardar : yaar yeh sent messege ka kya matlab hota hai? dosra sardar : yaar tum to bilkul jaahil ho tumhe iss ka matlab nahi pata. sent messege ka matlab “kushbo wala messege

عدالت میں فیصلہ ہوا كے 90 % سردار بیواقوف ہوتے ہیں . اِس فیصلے پر سارے سارداروں نے شور ڈالا . پِھر عدالت نے فیصلہ دیا كے صرف 10 % سردار بیواقوف نہیں ہوتے . تب جا کر ٹھنڈے ہوئے

adalat mein faisla sun-hwa ke 90 % sardar bewaqofe hotay hain. iss faislay par saaray sardaro ne shore dala. pِhr adalat ne faisla diya ke sirf 10 % sardar bewaqofe nahi hotay. tab ja kar thanday hue

سردار کی طبیعت خراب ہوگئی ، دوست : آؤ تمہیں ڈاکڑ كے پاس لے چلوں . سردار : پِھر کسی دن چلے گے آج میری طبیعت بہت خراب ہے

sardar ki tabiyt kharab hogayi, dost : aao tumhe dakar ke paas le chaloon. sardar : pِhr kisi din chalay ge aaj meri tabiyat bohat kharab hai

Sardar Ji ke Chutkule

کسی نے سردار سے پوچھا محبت شادی سے پہلے کرنی چاہیے یا بعد میں ؟ سردار : جب مرضی کرو . . . ! لیکن یاد رہے كے بیوی کو پتہ نہیں چلنا چاہیے 

kisi ne sardar se poocha mohabbat shadi se pehlay karni chahiye ya baad mein? sardar : jab marzi karo. ..! lekin yaad rahay ke biwi ko pata nahi chalna chahiye

 

ٹیچر سردار سے . . . . ! یہ بچہ تمہارا کیا لگتا ہے ؟ سردار : یہ میرا دور کا سگا بھائی . ٹیچر : کیا مطلب ؟ سردار : اس کے اور میرے درمیان 8 بہن بھائیوں کا وقفہ ہے 

teacher sardar se. .. .! yeh bacha tumhara kya lagta hai? sardar : yeh mera daur ka saga bhai. teacher : kya matlab? sardar : is ke aur mere darmiyan 8 behan bhaiyon ka waqfa hai

دوست : یار میری ٹیچر مجھ سے کہتی ہے كے بیھنس کا دودھ پینے سے دماغ تیز ہوتا ہے . سردار : یہ جھوٹ کہتی ہے ، اگر ایسی بات ہوتی تو بربیھنس کا بچہ انجینئر ہوتا

dost : yaar meri teacher mujh se kehti hai ke behans ka doodh peenay se dimagh taiz hota hai. sardar : yeh jhoot kehti hai, agar aisi baat hoti to behans ka bacha engineer hota

 

ایک بوڑہھی عورت سنیما حال میں کول ڈرنک کی بوتل لے کر بیٹھی تھی . کبھی 15 منٹس میں اسے منہ كے ساتھ لگاتی اور کبھی 30 منٹس میں پاس بیٹھے سردار کو غصہ آیا اور ایک ہی گھونٹ میں پی کر بولا ، ( ایسے پیتے ہیں ) بوڑہی عورت بولی  پر بیٹا میں تو پان تھوک رہی تھی 

aik burdhi aurat cinema haal mein cool drink ki bottle le kar baithi thi. kabhi 15 minutes mein usay mun ke sath lagati aur kabhi 30 minutes mein paas baithy sardar ko gussa aaya aur aik hi ghoont mein pi kar bola, ( aisay peetay hain ) borhi aurat boli par beta mein to paan thook rahi thi

 

سردار : مجھے شادی پر سسرال والوں سے بی ایم ڈبلیو ملا ہے . دوست : لیکن مجھے تو تمھارے گھر کوئی گاڑی نہیں دیکھی . سردار : اوئے پاگل بی ایم ڈبلیو مطلب ہے بہت موٹا وائف 

sardar : mujhe shadi par sasural walon se bi am w mila hai. dost : lekin mujhe to tumhare ghar koi gaari nahi dekhi. sardar : oye pagal bi am w matlab hai bohat mota wife

سردار : مجھے نیند میں کھوتے کھیلتے ہوئے نظر آتے ہیں . ڈاکڑ : میں تمہیں یہ داوئی لکھ کر دیتا ہوں کھا لیں سردار : کل نا کھا لوں ؟ ڈاکڑ : وہ کیوں ؟ سردار : آج انکا فائنل ہے 

sardar : mujhe neend mein khote khailtay hue nazar atay hain. dakar : mein tumhe yeh davyi likh kar deta hon kha len sardar : kal na kha lon? dakar : woh kyun? sardar : aaj inka final hai

 

سردار كے بھائی كے سَر پر مچھر بیٹھا ، سردار نے ڈنڈے سے مچھر كے ساتھ بھائی بھی مر دیا . باپ : یہ تم نے کیا کیا ہے ؟ سردار : آبا دشمنی میں سب چلتا ہے ایک انکا گیا اور ایک ہمارا گیا 

sardar ke bhai ke sar par machar betha, sardar nay danday se machar ke sath bhai bhi mar diya. baap : yeh tum nay kya kya hai? sardar : aaba dushmani mein sab chalta hai aik inka gaya aur aik hamara gaya .

Conclusion

We are 100% sure you will enjoy our Sardar Jokes in Urdu, we collected best of best funny sardar jokes in urdu for you, we are regularly adding more and more indian sardar jokes in urdu on daily basis, if you want to add your own sardar jokes in urdu then you can submit, we will add as soon as possible, please don’t forget to share sardar jokes in roman urdu with your friends and family members, we recommend you if you bookmark this website then you can regularly visit our website and get all kind of urdu poetry, urdu quotes, urdu jokes, poet biography and short stories.

Previous articleBest Pathan Jokes in Urdu 2021
Next articleShayari on Independence Day of Pakistan in Urdu

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here