Home Blog Page 3

Ek Bagh Ki Kahani | Urdu Moral Story

0
ek-bagh-ki-kahani

ek-bagh-ki-kahani

Ek Bagh Ki Kahani | Urdu Moral Story

ایک شخص اپنی پیداوار کے تین حصے کرتا تھا ایک حصہ اپنے کھانے اور بال بچوں کے کھانے کے لئے ایک اللہ کی راہ میں خرچ کرنے کے لیے نکلتا اور ایک حصہ اپنے باغ کی دیکھ بھال کے لئے رکھتا۔

وہ ہمیشہ ایسا ہی کیا کرتا تھا اس لیے اس کے کھیت میں اللہ تعالی کی طرف سے بڑی برکت ہوتی اور اس کی کھیتی ہمیشہ سرسبز رہتی اگر کبھی اس کے باغ کو سیراب کرنے کے لیے پانی نہ رہتا تو بادل کئی اور برستے اور پانی ندی نالوں سے ہو کر اس کے ہاں آ جاتا۔

ایک مرتبہ کا واقع ہے ایک ادمی جنگل میں سے جا رہا تھا اچانک اس کے کان میں آواز آئی کہ کوئی آدمی بادلوں سے کہہ رہا تھا کہ جاؤ اور فلاں کے باغ کو سراب کر دو بادلوں کو حکم دینے والے شخص نے باغ کے مالک کا نام بھی لیا۔

May You Also Like – Lucknow Bazar Ka Darzi | Islamic Stories | Urdu

چنانچہ وہ بادل وہاں سے ہٹ کر ایک پتھریلی زمین پر خوب موسلا دھار بارش برسائی وہ پانی بہہ کرایک نہر میں جا پونچھا وہ نہر اس آدمی کے باغ میں آتی تھی۔ 

اب وہ آدمی جو جنگل میں بادلوں کا منظر دیکھ رہا تھا وہ اس بہتے ہوئے پانی کے ساتھ ساتھ چل پڑا یہ دیکھنے کہ اخریہ پانی کس کے باغ کو سیراب کرتا ہے آخر یہ ماجرا کیا ہے اور یہ کس بزرگ کی کرامات ہیں۔

وہ ادمی نہر کے کنارے کنارے چلتا ہوا اس باغ تک جا پہنچا اور نہر سے ہو کر اب یہ پانی نالوں کے ذریعے اس کے باغ میں آنے لگا اور باغ کو سیراب کرنے لگا اس باغ میں ایک بزرگ پانی کو ادھر ادھر بکھر گئے تھے تاکہ پانی پورے باغ میں پھیل جائے۔

اس راہ گیر مسافر نے ان سے دریافت کیا کہ حضرت آپ کا نام کیا ہے اس بزرگ نے وہی نام بتائیے جو اس مسافر نے بادلوں میں سنا تھا بزرگ نے پوچھا کہ بھائی آپ میرا نام کیوں دریافت کر رہے ہیں کہ آپ کو مجھ سے کوئی کام ہے۔

اس مسافر نے بتایا کہ میں جنگل سے گزر رہا تھا وہاں میں نے ایک عجیب منظر دیکھا کہ کوئی آدمی بادلوں سے کہہ رہا تھا کہ وہ آپ کے باغ کو جاکر سیراب کر دیں

اس آدمی نے آپ کا نام بتایا تھا وہ بادل کہی اور برسا لیکن نہر کے ذریعے پانی آپ کے باغ میں آ پہنچا

یہ عجیب و غریب منظر دیکھ کر اس کی حقیقت جاننے کے لیے اس بہتے پانی کے ساتھ ساتھ چلتا آیا کہ دیکھو کہ وہ کیسے بزرگ ہیں جن پر یہ خاص نظرے رحمت ہیں پھر اس مسافر نے پوچھا کہ حضرت آپ کیا کرتے ہیں کہ اس باغ کو سیراب کرنے کا غیبی انتظام ہو جاتا ہے۔

اس پر ان بزرگ نے بتایا  اس باغ سے مجھے جو کچھ بھی ملتا ہے میں اس کے تین حصے کرتا ہوں ایک حصہ اپنی اولاد کے لئے ایک حصہ اللہ کی راہ میں خرچ کرتا ہوں اور ایک حصہ اس باغ کی دیکھ بھال کے لئے اس لئے جب بھی میرے باغ کو پانی کی ضرورت ہوتی ہے جو قدرت کی طرف سے اس کا انتظام ہو جاتا ہے۔

عزیز دوستو سچ ہے جو اپنی حلال کی کمائی کا کچھ حصہ اللہ کی راہ میں خرچ کرتے ہیں وہ کبھی رائیگاں نہیں جاتا بے شک اللہ بہترین بدلہ دینے والا ہے.

May You Also Like – Beautiful Moral Urdu Story | Adha Kambal

Happy
Happy
0 %
Sad
Sad
0 %
Excited
Excited
0 %
Sleepy
Sleepy
0 %
Angry
Angry
0 %
Surprise
Surprise
0 %

Badshah or 99 Dirham | Urdu Moral Story

0
badsha-or-99-dirham.png
badsha-or-99-dirham.png

Badshah or 99 Dirham | Urdu Moral Story

بادشاہ وقت نے اپنے وزیر سے پوچھا یہ میرے نوکرمجھ سے زیادہ خوش کیسے رہتے ہیں جبکہ ان کے پاس کچھ نہیں اور میرے پاس کسی چیز کی کمی نہیں۔

وزیر نے کہا بادشاہ سلامت آپنے کسی خادم پر قانون نمبر ۹۹ کا استعمال کر کے دیکھئے بادشاہ نے وزیر سے پوچھا اچھا یہ قانون نمبر ۹۹ کیا ہوتا ہے۔

اس نے کہا بادشاہ سلامت ایک صراحی میں ۹۹ درہم ڈال کر صراحی  پر لکھیے اس میں تمہارے لیے ۱۰۰ درہم ہدیہ ہے رات کو کسی خادم کے گھر کے دروازے کے سامنے رکھ کر دروازہ کھٹکھٹا کر چھپ جائے اور پھر تماشہ دیکھ لیجئے۔

بادشاہ سلامت نے جیسے وزیر نے سمجھایا تھا ویسے کیا بادشاہ نے ایک صراحی میں ۹۹ درہم ڈالے اور اس پر لکھ دیا یہ سو درہم تمہارے لیے ہدیہ ہے۔

May You Also Like – Lucknow Bazar Ka Darzi | Islamic Stories | Urdu

بادشاہ نے ایک خادم کے دروازے پر رکھ دیا اور دروازہ کھٹکھٹایا اور چپ کر تماشہ دیکھنا شروع کر دیا اندر سے خادم نکلا صراحی اٹھائی اور گھر چلا گیا درہم گنے تو۹۹ نکلے جبکہ صراحی پر لکھا ہوا تھا کہ سو درہم۔

سوچا یقینا ایک درہم کہیں باہر گم ہوگیا ہے خادم اور اس کے گھر والے سب باہر نکلے اور درہم کی تلاش شروع کر دی۔

ان کی ساری رات اسی تلاش میں گزر گئی خادم کا غصہ دیکھنے کے قابل تھا کچھ رات صبر اور باقی کی رات بک بک اور چھوک چھوک میں گزار دی خادم نے اپنی بیوی بچوں کو سست بھی کہا کیونکہ وہ درہم تلاش کرنے میں ناکام رہے تھے۔

دوسرے دن یہ ملازم محل میں کام کرنے کے لئے گیا تو اس کا مزاج مقدال آنکھوں سے چکرآتے کام سے جنجھلاہٹ شکل پرافسودگی آیہ تھی بادشاہ سمجھ گیا کے ۹۹ کا قانون کیا ہوا کرتا ہے۔

لوگ ان ۹۹ نعمتوں کو بھول جاتے ہیں جو اللہ تبارک و تعالیٰ نے انہیں عطا فرمائی ہوتی ہے اور ساری زندگی اس ایک نعمت کے حصول میں سرگرداں رہا کر گزر دیتے ہیں جو انہیں ملی نہیں ہوتی۔

اور یہ والی  نعمت بھی اللہ کی کسی حکمت کی وجہ سے رکی ہوئی ہوتی ہے جسے عطا کر دینا اللہ کے لیے بڑا کام نہیں ہوا کرتا۔

میرے عزیزو لوگ اپنی ایک نعمت کے لیے سرگرداں رہ کر اپنے پاس موجود ۹۹ نعمتوں کے لذتوں سے محروم ہوتے ہیں اپنی ۹۹ نعمتوں پر اللہ تبارک و تعالیٰ کا احسان مانیں اور ان سے مستفید ہوکر شکر ادا کیجئے۔

اللہ ہمیں اپنا شکر گزار بندہ بنا دے اللہ پاک ہم سب کو سے سمجھنے اور نیک اعمال کرنے کی توفیق عطا فرمائے۔ آمین یا رب العالمین

Happy
Happy
0 %
Sad
Sad
0 %
Excited
Excited
0 %
Sleepy
Sleepy
0 %
Angry
Angry
0 %
Surprise
Surprise
0 %

5 Logon Se Dosti Hargiz Na Karna | Must Read

0
5-person
5-person

5 Logon Se Dosti Hargiz Na Karna

پانچ قسم کے لوگوں سے دوستی نہ کریں امام جعفر صادق رحمۃ اللہ علیہ فرماتے ہیں کہ میرے والد امام باقر رحمۃ اللہ علیہ نے مجھے پانچ نصیحتیں کہ بیٹا پانچ قسم کے لوگوں سے دوستی نہ کرنا۔

بلکہ اگر کہیں راستے میں چل رہے ہوں تو ان کے ساتھ مل کر بھی نہیں چلنا وہ اتنے خطرناک ہوتے ہیں میں نے پوچھا وہ کون ہے تو انہوں نے فرمایا نمبر ایک جھوٹے سے دوستی نہ کرنا میں نے پوچھا کیوں وہ فرمانے لگے اس لیے کہ وہ دور کو قریب دکھائے گا اور قریب کودور دکھائے گا اور تمہیں دھوکے میں رکھے گا۔

میں نے کہا دوسرا کون فرمانے لگے تم کسی بخیل سے دوستی نہ کرنا کنجوسی سے دوستی نہ کرنا میں نے کہا کیوں وہ فرمانے لگے وہ تمہیں اس وقت چھوڑ دے گا جب تمہیں اس کی بہت زیادہ ضرورت ہوگی وہ دھوکہ دیے جاۓ گا اس لئے اس سے بھی دوستی نہ کرنا۔

May You Also Like – Hazrat Muhammad (S.A.W.W.) 40 Anmol Baatein | Must Read

میں نے کہا اچھا تیسرا کون وہ فرمانے لگے فاسق سے یعنی جو اللہ کے حکموں کو توڑنے والا ہوں اس سے بھی دوستی نہ کرنا میں نے پوچھا کس لیے فرمایا اس لیے کہ وہ تمہیں ایک روٹی کے بدلے بیچ ڈالے گا بلکہ ایک روٹی سے بھی کم رقم میں بیچ دیں گا۔

میں نے پوچھا ایک روٹی کے بدلے بیچنے کی بات تو سمجھ میں آتی ہے ایک روٹی سے کم میں کیسے بچے گا فرمایا بیٹے ایک روٹی کی امید میں تمہارا سودا کردے گا اور تمہیں باؤں کا پتہ بھی نہیں چلنے دے گا یعنی فاسق بندے کا کیا اعتبار ہے جو خدا کے ساتھ وفادار نہیں وہ بندوں کا  وفادار کیسے ہو سکتا ہے۔

نمبر چاربیوقف سے دوستی نہ کرنا میں نے پوچھا کس لئے  فرمایا اس لیے وہ تمہیں نفع پہنچانا چاہے گا اور نقصان پہنچا دے گا۔

میں نے پوچھا پانچوں کون فرمایا قطع رحمی کرنے والہ رشتے ناطے توڑنے والہ بےوفا انسان کے ساتھ دوستی نہ کرنا۔

May You Also Like – Be Namazi ki Saza in Urdu | Islamic Knowledge

Happy
Happy
0 %
Sad
Sad
0 %
Excited
Excited
0 %
Sleepy
Sleepy
0 %
Angry
Angry
0 %
Surprise
Surprise
0 %

Be Namazi ki Saza in Urdu | Islamic Knowledge

0
Be-namazi-ki-saza
Be-namazi-ki-saza

Be Namazi ki Saza in Urdu | Islamic Knowledge

بے نمازی کا انجام  پارہ نمبر 30 سورت الماعون آیت نمبر 5 اور 6 کا ترجمہ ہے اور ان نمازیوں کے لئے خرابی ہے جو اپنی نماز سے بھلے بیٹھے ہیں۔

حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ جہنم میں ویل نامی ایک خوفناک وادی ہے جس کی گرمی سے  خود جہنم بھی پناہ مانگتا ہے اور یہ اس شحض کا ٹکانہ ہے جو نماز کو وقت گزار کر پڑتا ہے یعنی دیر سے پڑتا ہے۔

جو شخص نماز کے معاملے میں سستی کرے گا اللہ تعالی اسے پندرہ سزائیں دے گا ان میں سے چھ دنیا میں تین موت کے وقت تین قبر میں اورتین قبر سے نکلنے کے بعد ہوگی۔

دنیا کی چھ سزائیں اللہ تعالی اس کی عمر سے برکت ختم کر دے گا اس کے چہرے سے نیک لوگوں کی علامات مٹا دے گا اللہ تعالی اس کے کسی عمل کا اجروثواب نہیں دے گا اس کی کوئی دعا حق تعالی آسمان تک بلند نہ ہونے دے گا۔

دنیا کی مخلوق اس سے نفرت کرے گی نیک لوگوں کی دعا میں اس کا کوئی حصہ نہ ہوگا۔

موت کے وقت اللہ تعالی اس پریہ تین سزائیں مسلط کرے گا پہلی سزا یہ ہے کہ وہ ذلیل ہو کر مرے گا دوسری سزا کے بھوکا مرے گا تیسری سزا مرتے وقت اتنی سخت پیاس لگے گی کہ اگر سارے دریاؤں کا پانی بھی اسے پلا دیا جائے تو بھی اس کی پیاس نہیں بجھے گی۔

May You Also Like – Where is the grave of Hazrat Yousaf in Urdu

قبر میں اللہ تعالی اس پر تین سزائیں مسلط کرے گا اللہ تعالی اس پر اس کی قبر تنگ کر دے گا اور قبر اس طرح دبائیں گی کہ اس کی پسلیاں ٹوٹ کر ایک دوسرے میں پیوست ہوجائیں گی۔

قبرمیں اگ بڑھکا دی جائے گی جس کے انگاروں میں وہ دن رات الٹ پولٹ ہوتا رہے گا۔

اس پر ایک اژدھا مسلط کر دیا جاے گا جس کا نام سوجا الاکرہ ہے یعنی گنجا سانپ ہے اس کی آنکھیں اگ کی اور ناخن لوہے کے ہوں گے ہر ناخن کی لمبائی ایک دن کی مسافت کے برابر ہوگی وہ گرج دار بجلی کی آواز میں کہے گا کہ میں سوجا الاکرہ ہوں۔

مجھے میرے رب نے حکم دیا ہے کہ میں تجھے فجر کی نماز ضائع کرنے کے جرم میں صبح سے لے کر ظہر تک اور ظہر کی نماز قضا کرنے سے ظہر سے لے کر عصر تک اور عصرکی  نماز قضا کرنے سے عصر سے لے کر مغرب تک اور مغرب کی نماز چھوڑنے پر مغرب سے لے کر عشاء تک اور عشاء کی نماز قضا کرنے پر عشاء سے لےکرصبح تک داستا رہو گا جب بھی وہ ضراب لگائے گا تو مردہ 70 ہاتھ زمین میں دھنس جائے گا تو اپنے ناخن زمین میں داخل کر کے اس کو نکالے گا اور یہ عذاب اس پر قیامت تک مسلط رہے گا۔

ہم عذاب قبر سے اللہ کی پناہ طلب کرتے ہیں قیامت کے دن اللہ تعالیٰ اسے یہ تین سزائیں دے گا اللہ تعالی اس پر ایک فرشتہ مسلط کرے گا جو اسے منہ کے بل گھسیٹتے ہوئے جہنم کی طرف لے جائے گا حساب کے وقت اللہ اس کی طرح ناراضگی والی نظر سے دیکھے گا جس سے اس کے چہرے کا گوشت چھرڑ جائے گا۔

اللہ تعالی اس سے حساب سختی سے لے گا جس سے زیادہ سخت طویل کوئی عذاب نہ ہوگا اور اللہ تعالی اس کو دوزخ میں لے جانے کا حکم صادر فرمائے گا اور جہنم بہت برا ٹھکانہ ہے اللہ پاک ہم سب کو سمجھنے اور نیک اعمال کرنے کی توفیق عطا فرمائے.

May You Also Like – Hazrat Muhammad (S.A.W.W.) 40 Anmol Baatein | Must Read

Happy
Happy
0 %
Sad
Sad
0 %
Excited
Excited
0 %
Sleepy
Sleepy
0 %
Angry
Angry
0 %
Surprise
Surprise
0 %

Hajr e Aswad History in Urdu | Black Stone

0
hajr-e-aswad-history-in-urdu

hajr-e-aswad-history-in-urdu

Hajr e Aswad History in Urdu | Black Stone

کیا آپ جانتے ہیں دنیا میں جنت سے آیا ہوا پتھر کونسا ہے نہیں معلوم تو ہم آپ کو بتاتے ہیں دنیا میں جنت سے آنے والا پتھر حجراسود ہے۔

جو کہ بیت اللہ میں ایستادہ ہے جس کے بارے میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہٖ وسلم نے فرمایا حجراسود دودھ سے بھی زیادہ سفید تھا جسے اولاد آدم کے گناہوں نے سیاہ کردیا ہے سنن ترمذی حدیث نمبر 877۔

روایات کے مطابق جب حضرت ابراہیم علیہ السلام اور ان کے بیٹے حضرت اسماعیل علیہ السلام خانہ کعبہ کی تعمیر کر رہے تھے تو حضرت جبرائیل نے یہ پتھر جنت سے لاکر دیا۔

May You Also Like – Hazrat Ibrahim Story in Urdu | Hazrat Ismail Ki Qurbani Ka Waqia

جسے حضرت ابراہیم علیہ السلام اپنے ہاتھوں سے دیوار کعبہ میں نصب کیا 606صدی میں جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی عمر مبارک 35 سال تھی سیلاب نے کعبہ کی عمارت کو سخت نقصان پہنچایا اور قریش نے اس کی دوبارہ تعمیر کی۔

لیکن جب حجراسود کا معاملہ آیا تو قبائل میں جھگڑا ہوگیا ہر قبیلے کی یہ خواہش تھی یہ سعادت اسے ہی نصیب ہو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے حجر اسود کو ایک چادر میں رکھا اور تمام سرداران قبائل سے کہا کہ وہ چادر کے کونے کو پکڑ کر اٹھائیں سب نے مل کر چادر کو اٹھایا اور جب چادر اس مقام پر پہنچی جہاں اس کو رکھا جانا تھا تو آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے مبارک ہاتھوں سے اس کو دیوار کعبہ میں نصب کردیا۔

حجراسود جو کعبہ کے جنوب مشرقی دیوار میں نصب ہے اس کے تین بڑے اور مختلف شکلوں کے چھوٹے چھوٹے ٹکڑے ہیں یہ ٹکڑے اندازاً ڈھائی فٹ قطر کے دائرے میں جڑے ہوئے ہیں۔

جن کے گرد چاندی کا گول دائرہ بنا ہوا عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ میں نےنبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو یہ فرماتے ہوئے سنا بلاشبہ حجر اسود اور مقام ابراہیم جنت کے یاقوت میں سے یاقوت ہیں اللہ تعالی نے ان کے نور اور روشنی کو ختم کر دیا ہے اللہ تعالی اگر اس روشنی کو ختم نہ کرتا تو مشرق و مغرب کا درمیانی حصہ روشن ہوجاتا سنن ترمذی حدیث۔

ایک حدیث کے مطابق حجر اسود کو چھونا گناہوں کا کفارہ ہے.

May You Also Like – History of Maqam e Ibrahim in Urdu

 

Happy
Happy
0 %
Sad
Sad
0 %
Excited
Excited
0 %
Sleepy
Sleepy
0 %
Angry
Angry
0 %
Surprise
Surprise
0 %

Aik Ajeeb Janaza | Urdu Moral Islamic Story

0
Ajeeb Janaza

Ajeeb Janaza

Aik Ajeeb Janaza | Urdu Moral Islamic Story

ایک علاقے میں ایک بابا جی کا انتقال ہو گیا جنازہ تیار ہوا اور جب اٹھا کر قبرستان جانے لگے تو ایک آدمی آگے آیا اور چارپائی کا ایک پاؤں پکڑ کر بولا مرنے والے نے میرے پندرہ لاکھ روپے دینے ہیں-

پہلے مجھے پیسے دے دو پھر اس کو دفن کرنے دوں گا آپ تمام لوگوں کھڑے تماشہ دیکھ رہے  تھے بیٹوں نے کہا مرنے والے نے ہمیں کوئی تو ایسی بات نہیں بتائی کہ وہ مقروض ہے اس لیے ہمیں پیسے نہیں دے سکتے۔

مرنے والے کے بھائیوں نے کہا جب بیٹے ذمہ دار نہیں تو ہم کیوں دے اب سارے کھڑے ہیں اور اس نے چارپائی پکڑی ہوئی ہے۔

May You Also Like – What Happens Few Seconds Before You Die? | Urdu

جب بات گھر کی عورتوں تک جا پہنچی مرنے والے کی اکلوتی بیٹی نے جب یہ بات سنی تو فورا اپنا سارا زیور اترا اور اپنی ساری نقد رقم جمع کرکے اس آدمی کے لیے بھجوا دیں اور کہا اللہ کے لیے یہ رقم اور زیور بیچ کر اس کی رقم رکھو اور میرے ابو کا جنازہ نہ روکو میں مرنے سے پہلے سارا قرضہ ادا کر دوں گی-

باقی رقم کا جلد بندوبست کروں گی اب وہ شخص کھڑا ہوا اور سارے مجمع کو مخاطب کرکے بولا اصل بات یہ ہے کہ میں نے مرنے والے سے پندرہ لاکھ لینے نہیں بلکے اس کے 15 لاکھ دینے ہیں اور اس کے کسی وارث کو میں جانتا نہ تھا۔

تو میں نے یہ کھیل کھیلا اب مجھے پتہ چل چکا ہے اس کی وارث ایک بیٹی ہے اور اس کا کوئی بیٹا اور کوئی بھائی نہیں اب بھائی منہ اٹھا کر اسے دیکھ رہے تھے اور بیٹے بھی۔

محترم دوستو جن کی بیٹیاں ہیں بہت خوش نصیب ہیں لہذا بیٹی کی پیدائش پر خوش ہونا چاہیے بیٹیوں کی شریعت میں بہت فضیلت بیان کی گئی ہے۔ 

May You Also Like – Beautiful Moral Urdu Story | Adha Kambal

Happy
Happy
0 %
Sad
Sad
0 %
Excited
Excited
0 %
Sleepy
Sleepy
0 %
Angry
Angry
0 %
Surprise
Surprise
0 %

History of Maqam e Ibrahim in Urdu

0
history-of-maqam-e-ibrahim-in-urdu

history-of-maqam-e-ibrahim-in-urdu

History of Maqam e Ibrahim in Urdu

اعوذ باللہ من الشیطٰن الرجیم بسم اللہ الرحمٰن الرحیم جب حضرت ابراہیم علیہ السلام کو اللہ تعالی کا حکم ہوا کہ خانہ کعبہ کی تعمیر کریں تو حضرت ابراہیم علیہ السلام نے اللہ تعالی کے حکم سے خانہ کعبہ کی تعمیر شروع کر دی۔

تعمیر کرتے کرتے جب خانہ کعبہ کی دیواریں حضرت ابراہیم علیہ السلام کے سر سے اونچی ہوگی اور آپ کے لیے مزید پتھر لگانا مشکل ہو گیا تو اس وقت حضرت ابراہیم علیہ السلام کا ایک معجزہ ہوا جو ایک پتھر کی شکل میں تھا جس کو مقام ابراہیم کہا جاتا ہے-

یہ ایک مقدس پتھر ہے جو خانہ کعبہ سے چند گز کی دوری پر رکھا ہوا ہے یہ وہی پتھر ہے کہ جب حضرت ابراہیم علیہ السلام کعبہ کی تعمیر فرما رہے تھے اور جب خانہ کعبہ کی دیواریں سرسے اونچی ہو گئی تو اس پتھر پر کھڑے ہوکر آپ علیہ السلام نے کعبہ معظمہ کی دیواروں کو مکمل فرمایا۔

یہ ایک معجزہ تھا یہ پتھر موم کی طرح نرم ہوگیا اور آپ علیہ السلام کے دونوں مقدس قدموں کا اس پتھر پر گہرا نشان پڑ گیا اس پتھر کا یہ بھی معجزہ ہے کہ جب حضرت ابراہیم علیہ السلام اس پر کھڑے ہوجاتے تو یہ پتھر خود  ہوا میں اڑنے لگتا اور خانہ کعبہ کی دیواروں کی طرف ہو جاتا اس طرح ابراہیم علیہ السلام آسانی کے ساتھ مزید پتھر لگا تے جاتے اور خانہ کعبہ کی تعمیر فرماتے جاتے تھے-

آپ کے قدموں کے مبارک نشان کی بدولت اس پتھر کی فضیلت اور عظمت میں اس طرح چار چاند لگ گئے کہ اللہ تعالی نے اپنی کتاب قرآن مجید میں دو جگہ اس کی عظمت کا خطبہ ارشاد فرمایا جس کا ترجمہ ہے یعنی کعبہ مکرمہ میں خدا کی بہت سی روشن اور کھلی ہوئی نشانیاں ہیں اور ان نشانیوں میں سے ایک بڑی نشانی مقام ابراہیم ہے اور دوسری جگہ اس پتھر کی عظمت کا اعلان کرتے ہوئے یہ فرمایا کہ اور ابراہیم کے کھڑے ہونے کی جگہ کو نماز کا مقام بناؤ۔

چار ہزار برس کے طویل زمانے سے اس بابرکت پتھر پر حضرت ابراہیم علیہ السلام کے مبارک قدموں کے نشان موجود ہیں اس طویل مدت سے یہ پتھر کھلے آسمان کے نیچے زمین پر رکھا ہوا ہے۔

اس پر چار ہزار بارساتیں گزر گئی ہزاروں طوفان کے جھونکے اس سے ٹکرائے بار ھا حرم کعبہ میں پہاڑی نالوں سے برسات میں سیلاب آیا یہ مقدس پتھر سیلاب کے تیز دھارے میں ڈوب رہا کروڑوں انسانوں نے اس پر ہاتھ پھیرا مگر اس کے باوجود آج تک حضرت ابراہیم علیہ السلام کے جلیل القدر قدموں کے نشان اس  پتھر پرباقی ہیں۔

جو بلاشبہ حضرت ابراہیم علیہ السلام کا ایک بہت ہی بڑا معجزہ ہے اور یقیناً یہ پتھر اللہ کی آیات اور کھلی ہوئی نشانی میں سے ایک بہت بڑا نشان ہے اور اس کی شان کا عظیم الشان نشان ہر مسلمان کے لئے بہت بڑی عبرت کا سامان ہے۔

کہ اللہ تعالی نے تمام مسلمانوں کو حکم دیا کہ تم لوگ میرے مقدس گھر خانہ کعبہ کے طواف کے بعد اس پتھر کے پاس دو رکعت نماز ادا کرو تم لوگ نماز تو میرے لئے پڑھو اور سجدہ میرا ادا کرو۔

لیکن مجھے یہ محبوب ہے کہ سجدوں کے وقت تمہاری پیشانیاں اس مقدس پتھر کے پاس زمین پر لگے کہ جس پتھر پر میرے خلیل حضرت ابراہیم علیہ السلام کے قدموں کا نشان بنا ہوا ہے۔

May You Also Like – Where is the grave of Hazrat Yousaf in Urdu

Happy
Happy
0 %
Sad
Sad
0 %
Excited
Excited
0 %
Sleepy
Sleepy
0 %
Angry
Angry
0 %
Surprise
Surprise
0 %

Hazrat Muhammad (S.A.W.W.) 40 Anmol Baatein | Must Read

0
muhammad-40-advice

muhammad-40-advice

Hazrat Muhammad (S.A.W.W.) 40 Anmol Baatein | Must Read

حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے کیا بیان فرمائے ہیں آئیے پڑھتے ہیں

 

1- ایک دوسرے کو سلام کریں

2 – ان سے ملاقات کرنے جائیں

3 – ان کے پاس اٹھنے بیٹھنے کا معمول بنائیں

4 – ان سے بات چیت کریں

5 – ان کے ساتھ لطف اور مہربانی سے پیش آئیں

6 – ایک دوسرے کو ہدیہ اور تحفہ دیا کریں

7 – اگر وہ دعوت دی تو قبول کریں

8 – اگر وہ مہمان بن کر آئیں تو ان کی ضیافت کریں 

9 – انہیں اپنی دعاؤں میں یاد رکھیں

10 – بڑے ہیں تو ان کی عزت کریں 

11 – چھوٹے ہوں تو ان پر شفقت کریں

12 – ان کی خوشی اور غم میں شریک ہوں

13 – اگر ان کو کسی بات میں اعانت درکار ہو تو اس کام میں انکی مدد کریں

14 – ایک دوسرے کے خیر خواہ بنیں

15 – اگر وہ نصیحت طلب کریں تو انہیں نصیحت کریں

16 – ایک دوسرے سے مشورہ کریں

17 – ایک دوسرے کی غیبت نہ کریں

18- ایک دوسرے پر طعن نہ کریں

19 – پیٹھ پیچھے برائیاں نہ کریں

20 – چغلی نہ کریں

May You Also Like – Where is the grave of Hazrat Yousaf in Urdu

21 – اڑے نام نہ رکھیں

22 – عیب نہ نکالیں

23 – ایک دوسرے کی تکلیفوں کو دور کریں 

24 – ایک دوسرے پر رحم کھائیں

25 – دوسروں کو تکلیف دے کر مزہ نہ اٹھائیں

26 – ناجائز مقابلہ نہ کریں مقابلہ کرکے کسی کو گرانا بری عادت ہے اس سے ناشکری کے اسباب پیدا ہوتے ہیں

27 – نیکیوں میں سبقت اور تلفظ جائز ہے جبکہ اس کے اڑ میں تکبر ریاکاری اور تحقیر کار فرما نہ ہو

28 – لالچ اور حسد سے بچے

29 – ایثار اور قربانی کا جذبہ رکھیں

30 – اپنے سے زیادہ آگے والے کا خیال رکھیں

31 – مذاق میں بھی کسی کو تکلیف نہ دیں

32 – نفع بخش بننے کی کوشش کریں

33 – احترام سے بات کریں اور بات کرتے ہوئے سخت لہجے سے بچیں

34 – غائبانہ اچھا ذکر کریں

35 – غصے کو قابو میں رکھیں

36 – انتقام لینے کی عادت سے بچیں

37 – کسی کو بھی حقیر نہ سمجھیں

38 – اللہ کے بعد ایک دوسرے کا بھی شکر ادا کریں

39 – اگر بیمار ہو تو عیادت کو جائیں

40 – اگر کسی کا انتقال ہو جائے تو جنازہ میں شرکت کریں

May You Also Like – Rizq Ke 16 Darwaze Aur Unki Chabi – Rizq Me Barkat Hogi

Happy
Happy
0 %
Sad
Sad
0 %
Excited
Excited
0 %
Sleepy
Sleepy
0 %
Angry
Angry
0 %
Surprise
Surprise
0 %

Rizq Ke 16 Darwaze Aur Unki Chabi – Rizq Me Barkat Hogi

0
Rizq-Ke-16 Darwaze-Aur-Unki Chabi

Rizq-Ke-16 Darwaze-Aur-Unki Chabi

Rizq Ke 16 Darwaze Aur Unki Chabi – Rizq Me Barkat Hogi

اللہ تعالی نے رزق کے 16 دروازے مقرر کئے ہیں اور ان کی چابیاں بھی بنائی ہیں جس نے یہ چابیاں حاصل کرلیں وہ کبھی تنگ دست نہیں رہے گا-

پہلا دروازہ نماز ہے جو لوگ نماز نہیں پڑھتے ان کے رزق سے برکت اٹھا دی جاتی ہے وہ پیسہ ہونے کے باوجود پریشان رہتے ہیں۔

دوسرا دروازہ استغفار ہے جو انسان زیادہ سے زیادہ استغفار کرتا ہے توبہ کرتا ہے تو اس کے رزق میں اضافہ ہو جاتا ہے اور اللہ ایسی جگہ سے رزق دیتا ہے جہاں سے  کبھی اس نے سوچا بھی نہیں ہوتا۔

تیسرا دروازہ صدقہ کرنا ہے اللہ تعالی نے فرمایا کہ تم لوگ اللہ کی راہ میں جو خرچ کرو گے اللہ اس کا بدلہ دے کر رہے گا انسان جتنا دوسروں پر خرچ کرے گا اللہ اس سے دس گنا زیادہ بڑا کر دے گا۔

چوتھا دروازہ تقویٰ اختیار کرنا ہے جو لوگ گناہوں سے دور رہتے ہیں اللہ ان کے لیے آسمان سے رزق کے دروازے کھول دیتا ہے۔

پانچواں دروازہ نفلی عبادت ہےجو لوگ زیادہ سے زیادہ نفلی عبادت کرتے ہیں اللہ ان پر تنگدستی کے راستے بند کر دیتا ہے اللہ کہتا ہے اگر تو عبادت میں کثرت نہیں کرے گا تو میں تمہیں دنیا کے کاموں میں الجھ کر رکھ دوں گا لوگ سنتوں اور فرض نماز پر توجہ دیتے ہیں لیکن نفل نماز چھوڑ دیتے ہیں جس سے رزق میں تنگی ہو جاتی ہے۔

چھٹا دروازہ حج اور عمرہ کی کثرت کرنا ہے حدیث میں آتا ہے کہ حج اور عمرہ گناہوں اور تنگدستی کو اس طرح دور کردیتے ہیں جس طرح آگ کی بھٹی سونا چاندی کے میل کو دور کر دیتی ہے۔

ساتواں دروازہ رشتہ داروں کے ساتھ اچھا سلوک کرنا ہے ایسے رشتے داروں سے بھی ملتے رہنا جو آپ سے قطع تعلق ہوں۔

آٹھواں دروازہ کمزورں کے ساتھ صلہ رحمی کرنا غریبوں کے غم بانٹنا مشکل وقت میں کام آنا اللہ تعالی کو بہت زیادہ پسند ہے۔

May You Also Like – Where is the grave of Hazrat Yousaf in Urdu

نوواں دروازہ اللہ پر توکل ہےجو شخص یہ عقیدہ رکھے کہ اللہ تعالی دے گا تو اللہ تعالی اسے ضرور دے گا اور جو شک کرے گا وہ پریشان ہی رہے گا۔

دسواں دروازہ شکر ادا کرنا ہے انسان جتنا شکر ادا کرے گا اللہ رزق کے دروازے کھولتا چلا جائے گا۔

گیارہواں دروازہ گھر میں مسکرا کر داخل ہونا گھر میں مسکرا کر داخل ہونا سنت بھی ہے حدیث میں آتا ہے کہ نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ اللہ فرماتا ہے کہ رزق بڑھا دوں گا جو شخص گھر میں داخل ہو کر مسکرا کر سلام کرے۔

بارہواں دروازہ ماں باپ کی فرمانبرداری کرنا ہے جو آدمی ماں باپ کی فرمانبرداری کرتا ہے وہ شخص کبھی تنگ دست نہیں ہو گا۔

تیرہواں دروازہ ہر وقت باوضو رہنا جو شخص ہر وقت نیک نیتی کیساتھ باوضو رہے اس کے رزق میں اللہ تعالی کمی نہیں ہونے دیتا۔

چودہواں دروازہ چاشت کی نماز پڑھنا ہے چاشت کی نماز پڑھنے سے رزق میں برکت ہوتی ہے حدیث میں آتا ہے کہ چاشت کی نماز رزق کو کھینچتی ہے اور تنگدستی کو دور بھگا دیتی ہے۔

پندرہواں دروازہ سورہ واقعہ پڑھنا ہےسورہ واقعہ پڑھنے سے رزق بڑھتا ہے۔

سولواں دروازہ اللہ تعالی سے دعا مانگنا ہے جو شخص صدق دل سے اللہ تعالی سے مانگتا ہے اللہ تعالی اس کو اتنا ہی عطا کرتا ہے۔

دوستوں میں امید کرتا ہوں کہ یہ پوسٹ اپ دوستوں کو پسند آئی ہوگی پوسٹ پسند آئے تو لائک اور شیئر ضرور کر دیجئے گا  اب تک کے لئے خدا حافظ اللہ پاک آپ سب کا حافظ و نگہبان  ہستے اور ہمیشہ مسکراتے رہیں۔

May You Also Like – What Happens Few Seconds Before You Die? | Urdu

Happy
Happy
0 %
Sad
Sad
0 %
Excited
Excited
0 %
Sleepy
Sleepy
0 %
Angry
Angry
0 %
Surprise
Surprise
0 %

Lucknow Bazar Ka Darzi | Islamic Stories | Urdu

0
lucknow-darzi-islamic-stories
lucknow-darzi-islamic-stories

Lucknow Bazar Ka Darzi | Islamic Stories | Urdu

لکھنؤ کے بازار میں ایک غریب درزی کی دکان تھی جو ہر جنازہ میں شرکت کے لیے دوکان بند کر دیا کرتا تھا لوگوں نے کہا اس طرح روز روز جنازے پر جانے سے آپ کا کاروبار ٹاپ ہو جائے گا۔

وہ کہنے لگا علماء سے سنا ہے جب کوئی آدمی کسی مسلمان کے جنازے پر جاتا ہے تو کل کو اس کے جنازے پر بھی لوگوں کا ہجوم ہو گا میں غریب ہوں اور نہ ہی زیادہ لوگ مجھے جانتے ہیں تو میرے جنازے پر کون آئے گا اس لئے ایک تو مسلمان کا حق سمجھ کر پڑھتا ہوں اور دوسرا یہ کہ شاید کل کو مجھے کوئی کاندھا دینے والا مل جائے گا۔

اللہ پاک کی شان دیکھیے 1902 میں مولانا عبدالحق لکھنیوی صاحب کا انتقال ہوا ریڈیو میں بتایا گیا اخبارت میں جنازے کی خبر دی گئی جنازے کے وقت لاکھوں کا مجمع تھا پھر بھی بہت سے لوگ ان کا جنازہ پڑھنے سے محروم رہ گئے۔

May You Also Like – What Happens Few Seconds Before You Die? | Urdu

جب جنازہ گاہ میں  ان کی نماز جنازہ ختم ہوئی تو اسی وقت جنازہ گاہ میں دوسرا جنازہ داخل ہوا اور اعلان ہوا کہ ایک اور مسلمان کا جنازہ بھی پڑھ کر جائے دوستوں یہ دوسرا جنازہ اسی درزی کا تھا۔

مولانا کے جنازے کے سب لوگ بڑے بڑے اللہ والے علمائے کرام سب نے اس درزی کا جنازہ پڑھا اور پہلے جنازے سے جو لوگ رہ گئے تھے وہ بھی اس میں شامل ہوگئے اس غریب درزی کا جنازہ تو مولانا کے جنازے سے بھی بڑھ کر نکلا۔

اللہ پاک نے اس درزی کی بات پوری کر کے اس کی لاج رکھی میرے محترم عزیز دوستو کسی نے سچ کہا ہے آج تم کسی کا خیال کرو گے تو کل کو لوگ تمہارا خیال کریں گے۔

اللہ پوری امت مسلمہ کے گناہوں کی بخشش اور ہدایت فرمائے اور ہم سب کا نزول فرمائے آمین یا رب العالمین۔

May You Also Like – Beautiful Moral Urdu Story | Adha Kambal

Happy
Happy
0 %
Sad
Sad
0 %
Excited
Excited
0 %
Sleepy
Sleepy
0 %
Angry
Angry
0 %
Surprise
Surprise
0 %